جامعہ فریدیہ اسلام آبادکاقبضہ مولانا عبدالعزیزکے حوالے

4 days ago


طلبہ کی اکثریت،اساتذہ نے مدرسہ چھوڑنے کافیصلہ کرلیا،جامعہ حفصہ کی طالبات کوٹھہرایاجائےگا

جامعہ فریدیہ اسلام آبادکاقبضہ مولانا عبدالعزیزکے حوالے کردیاگیاہے جس پروہاں کے طلبہ کی اکثریت اور اساتذہ نے مدرسہ چھوڑنے کافیصلہ کرلیاہے اوراب وہ اپنے آبائی علاقوں کوجاناشروع ہوگئے ہیں۔جامعہ فریدیہ کے اساتذہ اور طلبہ مولانا عبدالعزیز کے ذہنی رجحانات سے متفق نہیں تھے۔

یہ بات اہم ہے کہ مولانا عبدالغفارکی نظامت میں چلنے والامدرسہ جامعہ فریدیہ کاوفاق المدارس سے الحاق تھااوریہاں دینی کے ساتھ ساتھ سائنسی مضامین کی بھی تعلیم دی جاتی تھی جبکہ مولاناعبدالعزیزوفاق المدارس کوتسلیم کرتے ہیں اورنہ ہی سائنس کے مضامین کی تعلیم مدارس میں دیئے جانے کے حق میں ہیں اس پرطلبہ کی اکثریت نے اپنامستقبل مدنظررکھتے ہوئے جامعہ فریدیہ کو چھوڑنے کافیصلہ کیا۔

یادرہے کئی ماہ سے اس مدرسے کے حوالے سے مسائل چلتے آرہے تھے۔اس مدرسہ کے سابق مہتمم مولانا عبدالغفارتھے جن سے مولاناعبدالعزیزکامدرسے کے حوالے سے جھگڑاچل رہاتھا۔مولاناعبدالعزیزکادعویٰ تھاکہ یہ مدرسہ ان کاہے اورمولاناعبدالغفارکویہاں مدرسے کانظام چلانے کے لئے رکھاگیاتھاجوبعدمیں اس پرقابض ہوگئے۔

مولاناعبدالعزیز اور ان کی اہلیہ امِ حسان نے اپنے طلبہ کے ساتھ کئی باراس مدرسے پرقبضہ کرنے بھی کوشش کی جس پرکافی ہنگامہ کھڑاہواتھااورانتظامیہ نے ای7کے علاقے میں پولیس کی بھاری نفری کوتعینات کردیاتھاتاکہ کسی قسم کاجھگڑانہ ہو۔

کافی عرصہ تک حکومتی سطح پراس حوالے سے گفت وشنیدبھی چل رہی تھی جس پراسلام آبادکی ضلعی انتظامیہ کچھ بھی بتانے کے لئے تیارنہ تھی اورکہاجاتاتھاکہ یہ ایک حساس مسئلہ ہے اس پرخبریں نہ چلائی جائیں۔
اب آخرکارمدرسہ ایک بارپھرمولاناعبدالعزیزکے حوالے کردیاگیاہے اورمولاناعبدالغفارکویہاں سے بے دخل کردیاگیاہے۔امید ہے کہ جامعہ فریدیہ کی وجہ سے لال مسجد کے گرد بنایا گیا سیکورٹی کا حصار ختم کر دیا جائے گا۔

ادھرذرائع کاکہناہے کہ جامعہ حفصہ کی طالبات کولاکریہاں جامعہ فریدیہ میں ٹھہرایاجائے گا۔

شیئر کریں



یہ بھی پڑھیے


جامعہ فریدیہ اسلام آبادکاقبضہ مولانا عبدالعزیزکے حوالے