العزیزیہ ، ایون فیلڈ ریفرنسز : نوازشریف کو گرفتار کرکے پیش کرنے کا حکم

1 week ago


ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری،نمائندہ کے ذریعے پیش ہونے کی درخواست بھی مسترد

اسلام آباد ہائیکورٹ نے العزیزیہ اور ایون فیلڈ ریفرنسز میں نوازشریف کو گرفتار کرکے پیش کرنے کا حکم دے دیا۔اسلام آباد ہائی کورٹ میں جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی نے دونوں ریفرنسز میں نواز شریف کی سزا کیخلاف اپیل پر سماعت کی، نواز شریف کی جانب سے خواجہ حارث پیش ہوئے۔


جسٹس عامر فاروق نے خواجہ حارث کو روسٹرم پر بلا لیا اور کہا دلائل سن لیتے ہیں کہ سرینڈر کئے بغیر درخواست سنی جاسکتی ہے یانہیں، پہلے قانونی سوالوں کا آئینی جواب ملے پھر قانون کے مطابق دیکھتے ہیں۔خواجہ حارث نے دوران دلائل پرویز مشرف کیس سمیت مختلف عدالتی فیصلوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا نواز شریف کو دوسری عدالت نے اشتہاری قرار دیاہے، بغیر سنے نواز شریف کو اشتہاری قرار دیا گیا۔
جسٹس عامر فاروق نے استفسار کیا درخواست کیوں دائر کی گئی؟ پہلے نواز شریف کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست پر سماعت کرتے ہیں۔

العزیزیہ اورایون فیلڈ ریفرنسز میں متفرق درخواستوں پر سماعت میں نواز شریف کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست پر خواجہ حارث نے پرویز مشرف کیس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا انعام الرحیم نے پرویز مشرف کے اثاثوں کی چھان بین کی درخواست دی، پرویز مشرف کے وکیل کو پیش ہونے کی اجازت دی گئی، غیر معمولی حالات میں وکیل کوپیش ہونےکی اجازت دی جا سکتی ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے دلائل سننے کے بعدنوازشریف کی درخواستیں خارج کردیں اور ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کرتے ہوئے نوازشریف کو گرفتار کرکے پیش کرنے کا حکم دیا۔عدالت نے نوازشریف کی نمائندہ کے ذریعے پیش ہونے کی درخواست بھی مسترد کردی اور کہا نواز شریف ضمانت اورریلیف کے مستحق نہیں۔واضح یاد رہے نواز شریف نے آج پیشی سے حاضری کے لئے استثنیٰ کی دو متفرق درخواستیں دائر کر رکھی تھیں۔

شیئر کریں



یہ بھی پڑھیے


العزیزیہ ، ایون فیلڈ ریفرنسز : نوازشریف کو گرفتار کرکے پیش کرنے کا حکم