اردو | NEWS

افغان سفارتکارکوواپس بلانے کافیصلہ افسوسناک ہے:دفترخارجہ

اسلام آباد(ایم این این)دفترخارجہ نےافغان صدراشرف غنی کی جانب سے پاکستان میں تعینات اپنے سفیراورتمام سفارتی عملے کوواپس بلانے کے فیصلے کی شدیدمذمت کرتے ہوئے اسے بدقسمتی اورافسوسناک قراردیاہے۔ترجمان دفترخارجہ زاہدحفیظ چودھری کی جانب سے جاری بیان میں کہاگیاہے کہ افغان سفیرکی بیٹی کے اغوااورحملے کے معاملے کاوزیراعظم نے خودنوٹس لیااوران ہی کی ہدایت پراعلیٰ سطح پرتحقیقات کی جارہی ہے۔
ان کا کہنا تھاتحیقات کی پیروی کی جارہی ہے۔ افغان سفیر، ان کے اہل خانہ اور پاکستان میں افغانستان کے قونصل خانے کے عملہ کی سکیورٹی کو مزید سخت کر دیا گیا ہے۔سیکرٹری خارجہ نے آج افغانستان کے سفیر سے ملاقات کرکے حکومت کی جانب سے اٹھائے گئے تمام اقدامات پر روشنی ڈالی اور انہیں مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ حکومت افغانستان اپنے فیصلے پرنظر ثانی کرے گی۔
ادھروزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے افغان حکومت کی جانب سے اپنے سفیر کواچانک واپس بلالینے پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ایک بیان میں شاہ محمود قریشی نے کہاافغانستان کی جانب سے اپنا سفیراچانک بلالینے پر تشویش ہوئی،افغانستان کواپنے فیصلے پر نظرثانی کرنی چاہئے، افغان سفیر یہاں رہیں اور تحقیقات میں تعاون کریں۔
وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ امن کے پارٹنر بنناچاہتے ہیں، بھارت افغانستان کے امن میں مسلسل رکاوٹ ڈال رہا ہے۔افغانستان ایک طرف پاکستان پر الزام لگارہا ہے اور دوسری طرف تعاون مانگ رہا ہے،پاکستان نے پہلے ہی کہہ دیا تھا کہ بھارت ایف اے ٹی ایف کو سیاسی مقاصد کے لئے استعمال کررہا ہے۔

ویڈیوز

پیرس میں سجادیسی فیشن شو
ننھے مہمانوں سے رونقیں بحال
سرکاری ملازمین بھی احتجاج کیلئے نکل پڑے
میجرکی فروٹ چاٹ ہوگئی کامیاب