کوروناوائرس کولیبارٹری میں پیداکیاگیا:نارویجن سائنسدان کادعویٰ

5 months ago


اسے کبھی قدرتی ماحول میں پہلے کبھی نہیں دیکھاگیا
ناروے کے سائنسدان برجرسورنسن نے دعویٰ کیاہے کہ نول کوروناوائرس سارس ۔کو۔2قدرتی طورپر پیدا نہیں ہوا۔یہ دعویٰ برطانیہ اورناروے کی مشترکہ تحقیق جوسماجی ریویوآف بائیوفزکس میں شائع ہوئی اوراس کوبرطانیہ کی ایم آئی سکس کے سابق سربراہ سررچرڈڈیئرلووکی حمایت بھی حاصل ہے۔ سورن اوربرطانوی پروفیسرایگنس ڈیل گلیش کی مشترکہ تحقیق میں دعویٰ کیاگیاہے کہ وائس کے اوپرپائی جانے والی پروٹین مصنوعی طورپربنائی گئی لگتی ہے۔اس وائرس میں شکل بدلنے کی صلاحیت کانہ ہونابھی یہ ثابت کرتاہے کہ یہ پہلے سے انسانوں کے اجسام سے موافقت کیلئے بنایاگیاہے۔یہ تحقیق بائیوویک19 کاجوازفراہم کرنے کیلئے کی گئی تھی جوکووڈ19کے علاج کیلئے بنائی جارہی ہے اورتیاری کے مراحل میں ہے ۔سورن نے ایک نارویجن اخبارکوبتایاکہ اس وائرس کی ساخت سارس سے بالکل مختلف ہے اوریہ پہلے کبھی اسے قدرتی ماحول میں دیکھانہیں گیا۔ انہوں نے بتایاکہ چین اورامریکہ کئی سال سے کوروناوائرس پرتحقیق کررہے تھے۔سورن نے دعویٰ کیاہے کہ دونوں ممالک اس تحقیق کے ذریعے امراض کے پھیلنے اورعالمی وباپرقابوپانے کے سلسلے میں فوائدحاصل کرناچاہتے تھے۔ واضح رہے کہ کئی ماہ سے یہ افواہیں زیرگردش ہیں کہ یہ وائرس وہان میں ایک جدیدلیبارٹری جہاں وائرس پرتجربات کئے جارہے تھے سے پھیلاہے ۔اس لیبارٹری کے سربراہ نے سرکاری چینی ٹی وی کوبتایاکہ اس قسم کے دعوے بالکل بے بنیادہیں اوراس لیبارٹری نے سارس کووڈ۔2جیسے کسی وائرس پرکبھی کوئی تجربہ نہیں کیا۔ سورنسن کے مطابق سب سے پہلے چینی سائنسدانوں نے واقعات کی کڑیاں بیان کیں جن پرچل کربرطانیہ اورناروے نے یہ دعویٰ کیاہے کہ یہ وائرس قدرتی نہیں ہے۔انہوں نے دعویٰ کیاکہ اس واقعہ کے بعدچین نے اس قسم کی تمام تحقیقات پرپابندی لگادی ہے۔اس سے پہلے ایم آئی سکس کے 1999سے2004تک سربراہ رہنے والے سرڈیئرلوونے برطانوی اخبارٹیلی گراف کوبتایاتھاکہ دنیاکومفلوج کردینے والی یہ وباامکانی طورپرایک لیبارٹری سے پھیلی ہے۔ انہوں نے یہ دعویٰ کیاتھاکہ یہ بائیوسکیورٹی میں ناکامی کے باعث تجربات کے دوران یہ وائرس پھیل گیا۔انہوں نے کہایہ امکان بہت کم ہے کہ چین نے اسے جان بوجھ کرپھیلایاہولیکن یہ بالکل واضح ہے کہ چین نے اسے چھپانے کی کوشش کی۔انہوں نے کہاکہ میں یہ سمجھتاہوں کہ یہ ایک حادثے کے نتیجے میں شروع ہواجس سے یہ سوال پیداہواہے کہ کیاچین ذمہ داری قبول کرے گااوراس کامعاوضہ اداکرے گا؟ انہوں نے کہامیں سمجھتاہوں کہ تمام ممالک چین کے ساتھ اپنے تعلقات کواس تناظرمیں دیکھیں گے اوروہ کس طرح چینی قیادت کے ساتھ اپنے تعلقات کوسمجھتے ہیں۔ان کاکہناتھاکہ کئی سائنسی جریدوں نے محض اس لئے ان رپورٹس کومستردکردیاہے کہ کہیں ان سے چین ناراض نہ ہوجائے۔
شیئر کریں



یہ بھی پڑھیے


ماحول کے لئے نقصان دہ گیسوں کا نیا ریکارڈ
چین نے سکس(6) جی ٹیکنالوجی ٹیسٹ کرنے کیلئے سیارہ خلاءمیں بھیج دیا
ناساچاندپر4جی ٹاورزلگانے کیلئے نوکیاکی مددکرے گا

جاپان میں کوروناوائرس ختم کرنے والاآلہ تیار

2 months ago


قیمت 2 ہزار 860 ڈالر، صرف صحت کے ادارے آڈر دے سکتے ہیں

روشنی کے آلات کی جاپانی کمپنی اوشیو نے انسان کو نقصان پہنچائے بغیر کورونا وائرس کووِڈ19 کو ختم کرنے والی الٹرا وائلٹ شعاعیں پھیلانے والا آلہ تیار کرلیا۔

کولمبیا یونیورسٹی کے تعاون سے تیار کردہ کئیر222 نامی یہ آلہ 254 نینو میٹر لہروں والی UV شعاعیں پھیلانے والے روایتی آلات کے برعکس 222 نینو میٹر UV شعاعیں پھیلاتا ہے۔انسان کو نقصان پہنچائے بغیر جراثیم کو مارنے والا یہ آلہ رش والی بسوں، ٹرینوں، لفٹوں اور آفسوں کو جراثیم سے پاک کرنے کے لئے استعمال کیا جائے گا۔
ٹی آرٹی کے مطابق کئیر 222 نامی یہ آلہ مطلوبہ جگہ کی چھت سے لٹکایا جاتا ہے اور اڑھائی میٹر تک کے فاصلے پر ہوا میں موجود جراثیم کو 7 منٹ کے اندر 99 فیصد تک ختم کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔کویوڈو خبر رساں ایجنسی کے مطابق 222 نینو میٹر UV شعاعوں کے انسانی صحت کے لئے م±ضر نہ ہونے کی غیر جانبدارانہ ٹیسٹ کے ساتھ ہیروشیما یونیورسٹی کی طرف سے تصدیق کی گئی ہے۔
3 لاکھ ین تقریباً 2 ہزار 860 ڈالر کے اور 1.2 کلوگرام وزنی کئیر 222 آلے کے لئے فی الحال صرف صحت کے اداروں کی طرف سے آڈر وصول کئے جا رہے ہیں۔



پاکستان میں کورونا سے بچائو کی ویکسن کی آزمائش شروع

2 months ago


آزمائشی مرحلے میں8 سے 10 ہزار پاکستانی ہوں گے،وفاقی وزیراسدعمر

پاکستان میں کورونا سے بچائو کی ویکسن کی آزمائش شروع ہو گئی ہے۔وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ویکسن کا کلینکل ٹرائل صحت کے نظام میں بہتری کے لئے بھی اہم ہے۔انہوںنے بتایا کہ ویکسین کا کلینکل ٹرائل چین کے تعاون سے شروع کیا گیاہے، دوسرے مرحلے میں 508 افراد پر ٹرائل کیا گیا۔ تیسرے مرحلے میں 8 سے 10 ہزار افراد پر ویکسن کا ٹرائل ہو گا۔

وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ پاکستان میں کورونا ویکسین کے تیسرے مرحلے کا آزمائشی آغاز ہو گیا ہے۔ کورونا ویکسین چینی کمپنی نے تیار کی ہے، ویکسین ٹرائل میں 7 ممالک کے 40 ہزار افراد رضاکارانہ شریک ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ آزمائشی مرحلے میں 8 سے 10 ہزار پاکستانی ہوں گے، ٹیسٹ کے ابتدائی نتائج 4 سے 6 ماہ میں متوقع ہیں۔



1939میں چھٹی کے لئے لکھی گئی درخواست برآمد

2 months ago


طالبعلم کانام راج سنگھ،تعلق سرگودھاسے تھا

سرگودھاکی تحصیل ساہی وال میں ایک گھرکی مرمت کے دوران 80سال پرانی ہاتھ سے لکھی گئی درخواست نکل آئی۔درخواست چھٹی جماعت کے طالبعلم را ج سنگھ کی طرف سے لکھی گئی ہے جس میں بیماری کی وجہ سے رخصت مانگی گئی ہے۔

مذکورہ تاریخی مکان کوحالیہ بارشوں کی وجہ سے کافی نقصان پہنچاتھااورمکان کی دیوارکاایک حصہ گر گیا تھا ۔ دیوارکی دوبارہ تعمیرکے لئے جب کام آغازکیاگیاتواس میں سے ایک صفحہ برآمدہواجس پر چھٹی کے لئے درخواست لکھی ہوئی تھی۔درخواست اس وقت کے ہیڈماسٹرگورنمنٹ ہائی سکول کے نام لکھی گئی تھی جس پر29جون1939کی تاریخ درج ہے۔